یو اے ای میں رقم کی لین دین آسان اور تیز تر بنانے پر کام شروع

ابوظہبی (قدرت روزنامہ) متحدہ عرب امارات میں رقم کی لین دین کو آسان اور تیز تر بنانے پر کام شروع کردیا گیا، جس کے تحت مرکزی بینک کے ملک میں فوری ادائیگیوں کو قابل عمل بنانے کے اقدامات میں تیزی آگئی . دی نیشنل کے مطابق متحدہ عرب امارات کے مرکزی بینک نے کہا کہ اس وقت مالیاتی مارکیٹ کے بنیادی ڈھانچے کو نافذ کرنے کے اقدامات پر کام ہو رہا ہے جو ملک میں فوری ادائیگیوں کو قابل بنائے گا، یہ اقدام متحدہ عرب امارات میں ادائیگی کے منظر نامے کی تبدیلی کا باعث بنے گا، اس ضمن میں بینک کے چیف ایگزیکٹوز کے ساتھ ملاقات میں حکام نے ملک میں صارفین کے تحفظ کے فریم ورک پر بھی تبادلہ خیال کیا، جن میں شکایات کے انتظام اور سنادک نامی محتسب یونٹ کے قیام کی منصوبہ بندی بھی شامل ہے، یہ یونٹ خطے میں صارفین کی شکایت کے حل کا ایک منفرد طریقہ کار ہو گا جو صارفین کی شکایات کے حل کے لیے آسان رسائی اور فوری تبدیلی فراہم کرے گا .


معلوم ہوا ہے کہ مرکزی بینک نے اماراتی اقدامات کی پیشرفت پر بھی روشنی ڈالی جو متحدہ عرب امارات کے قومی ایجنڈے کے تحت خطے میں ڈیجیٹل ادائیگیوں کو آگے بڑھانے کے لیے اس سال بینکنگ سیکٹر میں ملازمت کرنے والے اماراتیوں کی تعداد میں اضافہ کرنا چاہتے ہیں . مرکزی بینک کے گورنر خالد بالاما نے کہا کہ ہم چیف ایگزیکٹوز کے ساتھ وقتاً فوقتاً یہ میٹنگز منعقد کرنے کے خواہشمند ہیں تاکہ ان اپ ڈیٹس اور اقدامات پر تبادلہ خیال کیا جا سکے جو بینکاری کے شعبے میں اضافہ کریں گے اور متحدہ عرب امارات کے مالیاتی ڈھانچے کی تبدیلی میں مدد کریں گے تاکہ عالمی سطح پر بہترین مرکزی بینکوں اور مالیاتی نظاموں میں شامل ہو سکیں، ہم اس شعبے کی ترقی میں بینکوں کے کردار کی بھی تعریف کرتے ہیں کیوں کہ انہوں نے میٹنگ کے دوران زیر بحث اقدامات کا خیرمقدم کیا .
بتایا گیا ہے کہ کورونا وباء کے بعد ڈیجیٹل تبدیلی کے درمیان یو اے ای میں ادائیگیوں کا منظرنامہ تیزی سے تبدیل ہو رہا ہے، ادائیگیوں کی صنعت میں نئے رجحانات متعارف کرائے جارہے ہیں جن میں ابھی خریدیں بعد میں ادائیگی کریں پلیٹ فارمز، ڈیجیٹل والیٹس اور کانٹیکٹ لیس کارڈ ماڈلز مقامی طور پر توجہ حاصل کر رہے ہیں . ادائیگیوں کے حل فراہم کرنے والے چیک آؤٹ ڈاٹ کام نے ایک حالیہ رپورٹ میں کہا کہ وبائی امراض کے بعد آن لائن ادائیگیوں میں اضافہ ہونے کی وجہ سے اب تمام رہائشیوں میں سے نصف سے زیادہ ڈیجیٹل والٹ استعمال کرتے ہیں، یہ نوجوان نسل میں زیادہ مقبول ہو گئے ہیں، متحدہ عرب امارات کے آدھے سے زیادہ صارفین 2024 تک کیش لیس ہونے کا ارادہ رکھتے ہیں، اس کے مقابلے میں عالمی اوسط 41 فیصد ہے .
امریکی ٹیکنالوجی کمپنی اینٹرسٹ نے مارچ کی ایک رپورٹ میں کہا کہ مشرق وسطیٰ کے صارفین کی اکثریت بھی ڈیجیٹل بینکنگ کی طرف جھکاؤ رکھتی ہے، متحدہ عرب امارات میں 61 فیصد آن لائن چینلز کے ذریعے لین دین کو ترجیح دیتے ہیں . مرکزی بینک نے کہا کہ مجموعی طور پر متحدہ عرب امارات کا بینکنگ سسٹم کورونا وباء کے دوران لچکدار رہا ہے، جس میں 2022ء کے دوران بینکنگ سسٹم کے کلیدی اعشاریوں میں وسیع البنیاد اور مضبوط ریکوری واضح ہے، ریگولیٹر نے کورونا کے دوران جامع امدادی اقدامات اور ایک اچھی ترتیب سے باہر نکلنے کی حکمت عملی متعارف کرائی جو ہنگامی اقدامات کو بتدریج اٹھانے اور بحالی کی مسلسل حمایت کے درمیان متوازن ہے .

. .
Ad
متعلقہ خبریں