شیریں مزاری کو قانون کے مطابق گرفتار کیا گیا تھا

لاہور(قدرت روزنامہ) حکام اینٹی کرپشن پنجاب کا کہنا ہے کہ شیریں مزاری کو قانون کے مطابق گرفتار کیا گیا تھا، شیریں مزاری سے قانون کے مطابق تحقیقات کی جائیں گی کیس ابھی ختم نہیں ہوا،وزیراعلیٰ کے حکم پر رہا کیا جارہا ہے . جیو نیوز کے مطابق حکام اینٹی کرپشن پنجاب کا کہنا ہے کہ شیریں مزاری کو جواب دینے کیلئے متعدد بار بلایا گیا لیکن وہ پیش نہیں ہوئیں، شیریں مزاری کو قانون کے مطابق گرفتار کیا گیا تھا .


حکام کا کہنا ہے کہ وزیراعلیٰ پنجاب کے احکامات پرعمل کرتے ہوئے شیریں مزاری کو رہا کیا جارہا ہے، شیریں مزاری سے قانون کے مطابق تحقیقات کی جائیں گی کیس ابھی ختم نہیں ہوا . واضح رہے وزیراعلیٰ پنجاب حمزہ شہبازشریف نے پی ٹی آئی رہنماء شیریں مزاری کی فوری رہائی کا حکم دیا ہے .

انہوں نے اپنے جاری کردہ حکم میں کہا کہ شیریں مزاری بطور خاتون قابل احترام ہیں، شیریں مزاری کی گرفتاری کے عمل سے اتفاق نہیں کرتا، کسی بھی خاتون کی گرفتاری معاشرتی اقدار سے مطابقت نہیں رکھتی، تفتیش اور تحقیقات میں گرفتاری ناگزیر ہے تو قانون اپنا راستہ خود بنا لے گا، شیریں مزاری کو گرفتار کرنے والے اینٹی کرپشن عملے کیخلاف تحقیقات ہونی چاہیے .

یاد رہے کہ پی ٹی آئی رہنماء ڈاکٹر شیریں مزاری کو اینٹی کرپشن کی ٹیم نے ان کے گھر کے باہر سے گرفتار کرلیا تھا، بتایا گیا ہے کہ ڈاکٹر شیریں مزاری کو ڈیرہ غازی خان میں زمین پر قبضے کا مقدمہ درج ہونے پر گرفتار کیا گیا، انہیں اینٹی کرپشن ڈیرہ غازی خان کی ٹیم نے گرفتار کیا، شیریں مزاری کی گرفتاری کے وقت اینٹی کرپشن کی ٹیم کو مزاحمت کا بھی سامنا کرنا پڑا .
دوسری جانب پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان نے اپنے ردعمل میں کہا کہ فاشسٹ حکومت نے شیریں مزاری کو تشدد کرکے ان کے گھر کے باہر سے اغواء کیا گیا، شیریں مزاری ایک بہادر اور نڈر خاتون ہے، امپورٹڈ حکومت کو لگتا ہے کہ شیریں مزاری کی آواز دبا پائیں گے تو یہ غلط ہے . امپورٹڈ حکومت فاشزم کے ذریعے ہمیں جھکانا چاہتی ہے تو یہ اس کی بھول ہے . ہماری تحریک مکمل طور پر پرامن ہے . چیئرمین تحریک انصاف عمران خان نے کہا کہ امپورٹڈ فاشسٹ حکومت ملک کو انتشار کی طرف لے جانا چاہتی ہے، کیا معیشت کی تباہی کافی نہیں تھی اب ملک کو انارکی کی طرف لے کرجانا چاہتے ہیں، تاکہ الیکشن نہ ہوسکیں . آج ہم احتجاج کریں گے اور کل کورکمیٹی کی میٹنگ کے بعد لانگ مارچ کی کال دوں گا .

. .
Ad
متعلقہ خبریں